Wednesday, August 24, 2005

دانیال صاحب کا استفسار پانچویں قسط اور دنیا کا دوہرا معیار

دانیال صاحب پوچھتے ہیں ۔ کیا یہ بات بھی صحیح نہیں کہ چیچنیا، کشمیر اور افغانستان میں جاری جہاد کا پاکستانی مدارس سے کچھ تعلق ہے؟
مدرسہ کے پڑھے ہوئے لوگ ہی نہیں دوسرے لوگ جو مولوی نہیں انہوں نے بھی چیچنیا، کشمیر اور افغانستان میں جاری جہاد کے حق میں تقاریر کی ہیں اور ممکن ہے کچھ نے حصہ بھی لیا ہو مگر طلباء کو عسکری تربیت دینے کا نہ مدرسوں میں انتظام ہے اور نہ ایسے انتظام سے مدرسوں کا تعلق ہے ۔ بغیر تربیت کے جنگی کاروائیوں میں حصہ لینا بعید از قیاس ہے ۔ کشمیر ۔ چیچنیا اور افغانستان کے جہاد میں حصہ لینے والوں میں انگریزی میڈیم سکولوں اور یورپ اور امریکہ میں پڑھے ہوئے جوان بھی شامل تھے جو کبھی پاکستانی مدرسہ نہیں گئے تھے اور بہت سے ایسے بھی جو پہلے کبھی پاکستان آئے ہی نہ تھے ۔ اس لئے یہ کہنا کہ پاکستان کے دینی مدرسے جہادی یا دہشت گرد تیار کرتے ہیں بالکل غلط ہے ۔ دنیا کی واحد سپرپاور بننے کے لئے سانپ مر جائے اور لاٹھی بھی نہ ٹوٹے کے مصداق مسلمانوں کو روس کے خلاف لڑانے کے لئے ان کی عسکری تربیت کا بندوبست امریکی حکومت نے کیا تھا جو دس سال چلتا رہا ۔ مقصد حاصل ہو جانے کے بعد امریکی حکومت نے انہیں آپس میں لڑنے کے لئے چھوڑ دیا ۔ وہی لوگ جن کو امریکی حکومت ہیرو کے طور پر اپنے ذرائع ابلاغ میں پیش کرتی تھی اب انہیں دہشت گرد قرار دے رہی ہے ۔ یہاں کلک کر کے پڑھئے کہ جنرل مرزا اسلم بیگ اس بارے کیا کہتے ہیں ۔ انتہاء پسندی کا لیبل بھی بغیر اس کی تشریح کئے لگایا جا رہا ہے ۔ کیا دین اسلام پر مکمل عمل کرنے والا انتہاء پسند ہے ؟ مدرسوں کے نصاب میں پچھلے پچاس سال میں کوئی خاص تبدیلی نہیں ہوئی اور نہ ماضی قریب تک کسی نے مدرسوں پر فرقہ واریت یا انتہاء پسندی یا دہشت گردی کا الزام لگایا تھا ۔ مدرسوں کا تعلق اتنا ضرور ہے کہ یہ مدرسے پاکستانی ہیں اور وہاں تعلیم پانے والے مسلمان ہیں ۔ پاکستان میں انسانیت کی دلدادہ کہلانے والی عاصمہ جہانگیر کہتی ہیں کہ اپنے نظریات کو دوسروں پر بزور نافذ کرنے والا انتہاء پسند ہوتا ہے ۔ تو کیا یہ نظریہ مدرسوں میں پڑھایا جاتا ہے ؟ ایسا ہر گز نہیں ہے اور مدرسوں میں پڑھنے والوں پر انتہاء پسندی کا لیبل لگانے والے اسلام دشمن ہیں اور ان کا ساتھ نام نہاد مسلمان ہیں جو ہر اخلاقی بندش سے آزادی کے خواہشمند ہیں ۔
۔ انسانیت کے علمبرداروں کا دوہرا معیار گرجا سے منسلک عورتیں جنہیں سسٹر اور نن کہا جاتا ہے اور کچھ کو مدر ۔ ہر وقت اپنے جسم کو اچھی طرح ڈھانپے رکھتی ہیں ۔ سر کے بال اور گردن ایک بڑے سے سکارف کے ساتھ ڈھانپے ہوئے ہوتے ہیں ۔ کلائیاں اور ٹخنے بھی نظر نہیں آتے ۔ کئی سسٹرز تو ہاتھوں میں دستانے اور پاؤں میں جرابیں بھی پہنے رکھتی ہیں ۔ جو سکول گرجوں کے زیر انتظام ہیں ان میں سسٹرز اسی لباس میں جاتی ہیں ۔ پوپ پال کی آخری رسومات ٹیلیویژن پر ساری دنیا میں دکھائی گئیں ۔ تمام عیسائی عورتوں نے اپنے سروں کو اچھی طرح ڈھانپ رکھا تھا ۔ میں نے دیکھا امریکہ کے صدر جارج واکر بش کی بیوی لورا بش نے دوپٹہ کی طرح کے کپڑے سے اپنے سر کو پوری تقریب میں اچھی طرح ڈھانپے رکھا ۔ مدرز ۔ سسٹرز اور ننز اپنے لباس میں مدبّر لگتی ہیں اور خواہ مخوا ان کی عزّت کرنے کو جی چاہتا ہے ۔ مسلمان عورتیں اپنے جسموں اور سروں کو ڈھانپتی ہیں تو انہیں بنیاد پرست انتہاء پسند اور دہشت گرد تک کہا جاتا ہے ۔ امریکہ ۔ کینیڈا اور یورپ کے کئی ممالک میں طالبات اور معلّمات کے لئے سر کو ڈھانپنا ممنوع قرار دیا گیا ہے اور سر ڈھانپنے کی کھلم کھلا مخالفت بھی کی جا رہی ہے ۔ یہ دوہرا معیار نہیں تو اور کیا ہے ؟ جو اپنے لئے میٹھا وہ دوسرے کے لئے کڑوا کیوں ؟
عورت کے ان نام نہاد حمائتیوں نے آج تک کسی عورت کو پوپ تو کیا معمولی پادری تک نہیں بنایا حالانکہ ایسی عورتیں گذری ہیں جو اس منصب کے لئے موذوں تھیں ۔ اس کے برعکس مسلمانوں کی تاریخ سے ایسی با علم اور اونچے کردار کی خواتین کا پتہ چلتا ہے جن کو مفتی بھی مانا گیا ۔ اس کے باوجود پراپیگنڈہ کیا جاتا ہے کہ اسلام عورت کو پسماندہ بناتا ہے اور پردے میں رہنے والی مسلمان عورتوں کو مردوں کا قیدی کہا جاتا ہے ۔ افسوس تو یہ ہے کہ مسلمان جن میں نیلوفر بختیار ۔ جسٹس ماجدہ ۔ عاصمہ جہانگیر ۔ حنا جیلانی ۔ وغیرہ اور بہت سے مرد بھی شامل ہیں صیہونیوں کے اس معاندانہ پراپیگنڈہ کا شکار ہو چکے ہیں ۔
باقی انشاء اللہ آئیندہ

9 Comments:

At 8/24/2005 08:13:00 AM, Anonymous زکریا said...

صیہونیوں کے اس معاندانہ پراپیگنڈہ کا شکار ہو چکے ہیں ۔

بات کوئی بھی ہو تان ہماری صیہونیوں پر آ کر ٹوٹتی ہے۔ آخر ایسا کیوں ہے؟

 
At 8/24/2005 04:17:00 PM, Blogger iabhopal said...

تان صیہونیوں پر آ کر اسلئے ٹوٹتی ہے کہ ہم ان کے ذہنی طور پر غلام ہو چکے ہیں اور غلام ہونے کی وجہ بین الاقوامی میڈیا ہے جس کی اکثریت پر صیہونیوں کا قبضہ ہے ۔ ایک وجہ یہ بھی فرض کی جا سکتی ہے چونکہ ہر دہشت گردی کی تان لا کر مسلمانوں اور پاکستان پر توڑی جاتی ہے تو اس کا رد عمل بھی ہو سکتا ہے ۔

 
At 8/25/2005 01:49:00 PM, Blogger haroldgribbel9346 said...

I read your blog, and i thought it was rather cool. check out My Blog
Please Click Here to view it

Have a great day.

 
At 8/26/2005 03:11:00 AM, Blogger Harris - حارث said...

uncle the above comment is a spam --^^^^

i'll read the previous posts then comment on this one.

 
At 8/26/2005 07:13:00 AM, Anonymous iftikharajmal said...

Thank you Haris. For the last one week such comments have started. I do not open because they may contain some undetectable virus.

 
At 8/27/2005 12:27:00 PM, Blogger Harris - حارث said...

دوہرا معیار ہی دجل ہے۔ ایک ہاتھ میں روٹی دوسرے میں تلوار۔ ایک ہاتہ میں زندگی دوسرے میں موت اور ظاہری جنت دراصل دوزخ ہے۔

بات صرف اتنی ہے کہ آخری وقت آ چکا ہے جب ہمارے [مسلمانوں کے] حکمران صہونیوں کے دوست ہونگے۔

 
At 8/27/2005 03:46:00 PM, Anonymous iftikharajmal said...

حارث صاحب
آپ نے کسی حد تک ٹھیک لکھا ہے ۔ جہاں تک میں نے پڑھا ہے قیامت سے پہلے ایک بار مسلمان دنیا پر چھا جائیں گے ۔ پھر جب مسلمان ختم ہو جائیں گے تو قیامت آئے گی ۔ واللہ علم بالصواب ۔

 
At 8/28/2005 12:48:00 PM, Blogger جہانزیب said...

انکل جھاں تک امريکہ کے بارے ميں آپکا خيال ہے کہ وہاں طالبات کو سر ڈھانپے سے منع کيا جاتا ہے تو ميرے ذاتی مشاہدے ميں يہ صيح نہيں ہے۔ يہاں اکثر ہائی سکولوں ميں جہاں مسلمان طلبہ کی تعداد زيادہ ہے مسجد تک کا انتظام کيا گيا ہے۔نيو يارک کی حد تک ميں اس بات کا گواہ ہوں ہمارے گھر کے پاس سکول ميں رمضان ميں باقاعدہ باجماعت نماز کی ادائيگی کی سہولت ہے۔

 
At 8/28/2005 06:08:00 PM, Blogger میرا پاکستان said...

کينيںا ميں بہي سر ڈہانپنے پر کويي پابندي نھيں ھے۔ ميرے بچے سکول جاتے ھيں جھاں پر جمعھ کي نماز کا بندوبست بہي ھے۔
آپ کي يھ بات صيحح ھي کھ نن سر ڈہانپے تو ٹہيک اگر مسلمان ڈہانپے تو ڎلط۔

 

Post a Comment

links to this post:

Create a Link

<< Home