Wednesday, August 09, 2006

يہ حال کيوں ؟

مُلک کا يہ حال کيوں ؟ يہ وہ سوال ہے جو پاکستانيوں کے دماغ ميں بار بار اُٹھتا ہے مگر زيادہ تر لوگ اس کا جواب نہيں تلاش کرتے ۔ کچھ لوگ اس کا تمام تر قصوروار مُسلمان ہونے کو گردانتے ہيں ۔ حقيقت يہ ہے کہ ہم اگر باعمل مُسلمان ہوتے تو ہمارا يہ حال نہ ہوتا ۔ ميں آج ہماری قوم کے تنزّل کی وجوہات ميں سے صرف ايک بظاہر معمولی مگر اہم وجہ پر سے پردہ اُٹھاتا ہوں ۔ باقی انشاء اللہ پھر کبھی ۔ گو شاعر تو کہتا ہے پردے ميں رہنے دو ۔ پردہ نہ اُٹھاؤ پردہ جو اُٹھ گيا تو بھيد کھُل جائے گا ميں 6 اگست کو اتوار بازار سے سودا سلف لينے کے بعد گاڑی ميں بيٹھا ۔ اسے سٹارٹ کر کے ريورس کر رہا تھا کہ ايک گاڑی آ کر پيچھے کھڑی ہو گئی اور پيچھے ہٹنا نہيں چاہتی تھی ۔ ميں نے اُس کو راستہ ديا ليکن موقع سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے چار پانچ گاڑياں تيز ہو کر زبردستی نکل گئيں ۔ ميں نے دوسری بار گاڑی ريورس کرنا شروع کی پھر وہی ہوا اور کئی گاڑياں زبردستی نکليں ۔ تيسری بار ميں ريورس کر کے آدھی سے زيادہ گاڑی نکال چکا تھا کہ پيچھے ايک گاڑی آ کھڑی ہوئی ۔ اب ميری گاڑی ايسے رُخ ميں تھی کہ آگے نہيں جا سکتی تھی ۔ ميں گاڑی سے باہر نکل کر اس کے مالک سے کہا کہ گاڑی کو تھوڑا پيچھے ہٹا ليجئے ۔ سب کچھ ديکھتے ہوئے پانچ گاڑی والوں نے اپنی گاڑياں آگے لا کر اُس کے پيچھے کھڑی کر ديں ۔ پھر ميں نے ہر ايک سے عليحدہ عليحدہ درخواست کی تو دس منٹ بعد اتنی جگہ بنی کہ ميں نے گاڑی پيچھے کر کے سيدھی کر لی ۔ ابھی ميں نے چند فٹ ہی گاڑی چلائی تھی کہ بائيں طرف سے ايک گاڑی ميرے سامنے آ کر کھڑی ہو گئی اور اس کے پيچھے پانچ چھ گاڑياں اور آ کے کھڑی ہو گئيں ۔ ميں نے اس گاڑی کے مالک کو سمجھايا کہ اگر آپ گاڑی پيچھے ہٹا ليں تو ميں نکل جاؤں گا تو آپ کو گاڑی پارک کرنے کی جگہ مل جائے گی اور باقی گاڑياں بھی نکل سکيں گی ۔ اس نے گاڑی ہٹائی تو باہر نکلنے کے راستہ سے داخل ہو کر دو گاڑياں آ کر ميرے سامنے کھڑی ہو گئيں اور سب باہر جانے کيلئے تيار گاڑيوں کا راستہ بند کر ديا ۔ پوليس مين اور ميں نے اُنہيں گاڑياں پيچھے کرنے کو کہا مگر اُن کے مالک بضد کہ ميں گاڑی پيچھے ہٹاؤں ۔ کمال يہ کہ وہ لوگ جن کی گاڑياں اُن دو اشخاص کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے پھنسی ہوئی تھيں وہ مجھے کہنے لگے کہ وہ گاڑی نہيں ہٹاتے اس لئے آپ ہٹا ديں ۔ اُنہوں نے يہ بھی نہ سوچا کہ ميری گاڑی کو پيچھے ہٹانے کی گنجائش نہيں ۔ ميں نے اُن سے کہا کہ ميں دوسروں کو سہولت دينے کے نتيجہ ميں40 منٹ سے يہاں پھنسايا گيا ہوں اور وہ دونوں ابھی آئے ہيں اور وہ بھی غلط راستے سے ۔ آپ لوگ حق کا ساتھ دينے کی بجائے غلط کا ساتھ کيوں دے رہے ہيں ؟ تو اُن کے پاس جواب نہ تھا ۔ صرف ايک شخص جس نے ميرے کہنے پر اپنی گاڑی پيچھے ہٹائی تھی اُس نے ميرا ساتھ ديا ۔ اب درجنوں گاڑياں پھنس چکی تھيں ۔ آخر ميں نے بلند آواز ميں کہا ۔ ہمارے مُلک کا ستياناس اسی وجہ سے ہو رہا ہے کہ لوگ حق کا ساتھ دينے کی بجائے جابر کا ساتھ ديتے ہيں ۔ اب اگر ميری گاڑی کے پيچھے کھڑی تمام گاڑياں پيچھے ہٹ جائيں تو بھی ميں اپنی گاڑی پيچھے نہ ہٹاؤں گا ۔ جو غلط ہے اُسے گاڑی پيچھے ہٹانا ہو گی ۔ ديکھتے ہيں کہ جيت حق کی ہوتی ہے يا جابر کی ۔ کچھ دير بعد چند لوگ اُن دونوں کے پاس گئے ۔ باقيوں نے اپنی گاڑيوں سے باہر نکلنے کی زحمت بھی گوارہ نہ کی ۔ پندرہ بيس منٹ کی بحث کے بعد اُن دونوں نے گاڑياں ريورس کيں اور سب کو راستہ ملا ۔ اگر ہم لوگ آج فيصلہ کر ليں کہ حق کا ساتھ ديں گے اور جابر کا ساتھ نہيں ديں گے تو تھوڑی تکليف ضرور اُٹھانا پڑے گی مگر اپنا معاشرہ اپنا مُلک بہت اچھا بن جائے گا ۔ اللہ ہميں حق کا ساتھ دينے کا حوصلہ عنائت فرمائے ۔ آمين * ميرا يہ بلاگ مندرجہ ذیل یو آر ایل پر کلِک کر کے يا اِسے اپنے براؤزر ميں لکھ کر بھی پڑھ سکتے ہيں http://iftikharajmal.wordpress.com میرا انگريزی کا بلاگ ۔ یہ منافقت نہیں ہے کیا ۔ ۔Hypocrisy Thy Name مندرجہ ذیل یو آر ایلز ميں سے کسی ايک پر کلِک کر کے يا اِسے اپنے براؤزر ميں لکھ کر پڑھيئے ۔ http://hypocrisythyname.blogspot.com http://iabhopal.wordpress.com

3 Comments:

At 8/09/2006 10:40:00 AM, Blogger urdudaaN said...

mohtaram,

bilkul yahi kuchh hamaare saath bhi rozanah darpesh aata hai. main to yeh kahoonga keh yeh sirf pakistan ka maslaa naheen hai, balkeh barre-saGHeer hindo-pak se lekar poore mashriq ka rujhaan yun hai keh jo samajhdar hai use aor dabaao kyun keh woh aasaan hota hai.

agar aap ke saamne koi sahab mobile ka shauq farmaa rahe hain to na unheiN haTaaeN na khud rukeiN balkeh saamne se aane waale ko khadeRte hue raaste ke neeche utar kar nikal jaaeN jo nisbatan aasaan hota hai.

 
At 8/09/2006 05:30:00 PM, Anonymous Noman said...

its quite depressing being a muslim nation; when I compare it with attitude people here in western world there is a huge difference moral values in our daily life.. we may be 10 years laging behind in Science and Technology but 100 years in behind in moral and ethical practice despite having guidelines in the form of Quran and Sunnah.

 
At 8/09/2006 08:36:00 PM, Blogger iabhopal said...

اُردودان صاحب
آپ نے صحيح فرمايا ۔ ہند و پاک ميں رہنے والے ايک ہی قسم کے اوصاف کے مالک ہيں

نعمان صاحب
آپ نے ٹھيک فرمايا ليکن مسئلہ يہ ہے کہ موجودہ صدی کے زيادہ تر مسلمان سمجھتے ہيں کہ صرف کلمہ طيّبہ پڑھ لينا ہی کافی ہے ۔

 

Post a Comment

links to this post:

Create a Link

<< Home